جمعرات , مارچ 21 2019
Home / اہم خبریں / انسانی حقوق کے عالمی دن پر رواداری تحریک کا امن کے قیام اور تشدد کے خاتمے کا مطالبہ
public convention

انسانی حقوق کے عالمی دن پر رواداری تحریک کا امن کے قیام اور تشدد کے خاتمے کا مطالبہ

لاہور(اسٹاف رپورٹر) انسانی حقوق کے عالمی دن پر رواداری تحریک کی طرف سے انتہاء‌پسند تنظیموں‌پر پابندی،انسانی حقوق سے محروم طبقات بالخصوص بھٹہ مزدور، مذہبی اقلیتیں،خواجہ سراء، سینٹری ورکرز، اور دیگر ایسے طبقات جو اپنے بنیادی حقوق سے محروم ہیں ان کو حقوق کی فراہمی کے لئے خصوصی اقدامات کیے جائیں.

تفصیلات کے مطابق رواداری تحریک کے زیر اہتمام انسانی حقوق کے عالمی دن کے موقع پر علی انسٹیٹیوٹ آف ایجوکیشن میں عوامی کنونشن برائے امن کا انعقاد کیا گیا. جس میں سیاسی و سماجی شخصیات نے کثیرتعداد میں شرکت کی. امن کنونشن کی کامیابی کا سہرا انتظامیہ کے سر جاتا ہے جنہوں نے رنگ و نسل اور مذہب کی تفریق سے بالا تر ہوکر حقیقی معنوں میں عوامی اجتماع منعقد کیا. اس موقعے پر ناں‌صرف پنجاب بلکہ پورے پاکستان سے لوگوں نے اس عوامی کنوینشن میں‌شرکت کی.

چئیرمین رواداری تحریک سمسن سلامت نے اس موقعے پر مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انتہاء‌پسند تنظیموں‌پر پابندی عائد کی جائے،انسانی حقوق سے محروم طبقات بالخصوص بھٹہ مزدور، مذہبی اقلیتیں،خواجہ سراء، سینٹری ورکرز، اور دیگر ایسے طبقات جو اپنے بنیادی حقوق سے محروم ہیں ان کو حقوق کی فراہمی کے لئے خصوصی اقدامات کیے جائیں.

انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کو انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے. لہذا وقت کی ضرورت ہے کہ ریاست اور متعلقہ ادارے انتہاء‌پسند تنظیموں‌کے خلاف مضبوط اور سنجیدہ اقدامات اٹھائیں. انہوں‌نے کہا کہ تعلیمی نصاب میں‌رواداری اور امن کے بیانیے پر مواد شامل کرنا انتہائی ضروری ہے. جبکہ اس کنونشن میں‌انسانی حقوق کی بگڑتی صورتحال خصوصا میڈیا سینسرشپ اور سول سوسائیٹی پر پابندی پر اظہار تشویش کیا گیا.رواداری تحریک کے چئیرمین نے اپنے خطاب میں‌ پاکستان کئ امن پسند شہریوں‌ سے اپیل کی کہ وہ شدت پسند اور انتہاء‌پسند قوتوں‌کے ہاتھوں‌ یرغمال نہ ہوں.

عوامی کنونشن میں‌ رواداری تحریک کی جانب سے ریاستی اداروں‌ سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ نیشنل ایکشن پلان پر عمل کرواتے ہوئے شدت پسند تنظیموں اور ان کے سہولت کاروں‌ کے خلاف بھرپور کاروائی کریں. اور پاکستان میں‌امن اور آشتی کی فضا کو بحال کریں.

اس موقعی پر جہا‌ں‌سندھ اور بلوچستان سے آئے ہوئے شرکاء نے سندھی اور بلوچی ثقافت کے رنگ بکھیرے. وہیں‌لال بینڈ میوزک گروپ کی جانب سے موسیقی بھی پیش کی گئی. جس نے ذہنوں‌کو جھجھو‌ڑ‌ا اور مثبت سوچنے پر مجبور کیا. اس موقعے پر لال بینڈ کے تیمور الرحمان نے کہا کہ انسانیت سب سے بڑا مذہب ہے. ہمیں‌معاشرے میں ایک دوسرے کے لئے acceptance پیدا کرنی ہوگی. امن اور روادری ہو گی تو ہمارا ملک پاکستان ترقی کی شاہراہ پر گامزنہو سکے گا.

عوامی کنونشن میں‌رواداری تحریک کے چئیرمین سمسن سلامت، دیدار احمد میرانی، راشد بشیر چٹھہ، عمر فاروق، پنہل ساریو، غلام مصطفیٰ میرانی، نصیر احمد، بابا لطیف انصاری، پاکستان تحریک انصاف سے سعدیا سہیل رانا( ممبر صوبائی اسمبلی) وجاہت بتول، سامعہ، سندھ سے سیما شیخ، شاہدہ نور منگی، مرجان سندھو اور دیگر نے شرکت کی.

Check Also

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے اسٹار بیٹسمین احمد شہزاد

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز، پی ایس ایل کی نئی چیمپئن

محمد واحد کراچی: کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نئی چیمپئن بن گئی ہے، جس نے یکطرفہ مقابلے …