بدھ , اپریل 24 2019
Home / کاروبار / سیمنٹ سیکٹر دشوار حالات سے دوچار

سیمنٹ سیکٹر دشوار حالات سے دوچار

کراچی (اسٹاف رپورٹر) سیمنٹ سیکٹر دشوار حالات سے دوچار ہے جبکہ برآمدات میں شاندار اضافے کے باوجود بھی گزشتہ سال کے مقابلے میں نومبر 2018ء میں ایک فیصد مجموعی کمی واقع ہوئی ہے۔

نشونما میں گزشتہ پانچ برس سے ہونے والی بہتری اب مقامی کھپت میں جمود کے باعث رک گئی ہے جبکہ ملک کے جنوبی حصے میں روپے کی قدر میں کمی کے باعث برآمدات میں اضافہ ہوا ہے۔ تاہم، افغانستان اور ایران سے سیاسی تعلقات کے باعث برآمدات کو فائدہ نہیں ہوا۔

نومبر میں سیمنٹ کی فروخت 3.899 ملین ٹن تھی جو گزشتہ برس اسی ماہ کے مقابلے میں ایک فیصد کم ہے جو اُس وقت 3.941 ملین ٹن تھی۔ مجموعی مقامی کھپت گزشتہ برس نومبر 2017ء ؁ میں 3.593 ملین ٹن تھی اور یہ نومبر 2018ء ؁ میں کم ہو کر3.337 ملین ٹن ہوگئی اس طرح اس میں 7.13 فیصد کمی واقع ہوئی۔ تاہم، برآمدات میں اضافہ جاری رہا اور یہ 61.33 فیصد اضافے کے ساتھ گزشتہ برس نومبر 2017ء ؁ میں 0.349 ملین ٹن سے بڑھ کر نومبر 2018ء ؁ میں 0.563 ملین ٹن ہوگئی۔

ملک کے شمالی علاقوں میں قائم کارخانوں کی فروخت نومبر 2018ء ؁ میں 2.871 ملین ٹن رہی۔ یہ گزشتہ برس نومبر 2017ء ؁ میں 3.245 ملین ٹن تھی۔ مقامی سیمنٹ کی فروخت نومبر 2018ء ؁ میں 2.632 ملین ٹن تک کم ہوگئیں تھیں جو نومبر 2017ء میں 2.967 ملین ٹن تھیں۔ اسی طرح اس خطے کی برآمدات بھی کمی کا شکار رہیں جو نومبر 2017ء ؁ میں 0.278 ملین ٹن سے کم ہو کر نومبر 2018ء ؁ میں 0.239 ملین ٹن ہو گئیں۔

ملک کے جنوبی حصے میں قائم کارخانوں کی نومبر 2018ء ؁ میں کھپت 1.029 ملین ٹن رہی جو گزشتہ سال 2017ء ؁ میں 0.696 ملین ٹن تھی۔ اس خطے میں مقامی فروخت میں اضافہ ہوا جو گزشتہ برس 2017ء ؁ میں 0.626 ملین ٹن سے بڑھ کر نومبر 2018ء ؁ میں 0.705 ملین ٹن ہوگئیں۔ اسی طرح برآمدات بھی اضافے کے بعد 0.324 ملین ٹن ہوگئیں جو گزشتہ سال نومبر 2017ء ؁ میں 0.070 ملین ٹن تھیں۔

ملک کے جنوبی حصے میں قائم کارخانوں کی مجموعی فروخت ابتدائی پانچ مہینوں میں 19.253 ملین ٹن رہی جو گزشتہ برس اسی مدت کے مقابلے میں 4 فیصد زیادہ ہے اور گزشتہ سال یہ 18.513 ملین ٹن تھی۔ مقامی فروخت جولائی تا نومبر 2018ء ؁ کے دوران 16.283 ملین ٹن رہیں جو گزشتہ سال 2017ء جولائی تا نومبر 16.434 ملین ٹن تھیں۔

یہ صورت حال انڈسٹری کی مقامی کھپت میں ہونے والی مجموعی کمی کو ظاہر کرتی ہے حالانکہ انڈسٹری مقامی کھپت میں اضافے کے لیے اپنی پیداواری صلاحیت میں اضافہ کررہی ہے۔ برآمدات مالی سال 2017-18ء کے ابتدائی پانچ ماہ میں2.079 ملین ٹن تھیں جس میں 42 فیصد اضافہ ہوا اور یہ رواں مالی سال کے ابتدائی پانچ میں بڑھ کر 2.969 ملین ٹن ہوگئیں۔

سیمنٹ انڈسٹری درآمدی کوئلے کو ایندھن کے طور پر استعمال کرتی ہے تاہم روپے کی قدر میں کمی کی وجہ سے سیمنٹ کی پیداواری لاگت میں اضافہ ہوا ہے۔

ترجمان آل پاکستان سیمنٹ مینوفیکچررز ایسوسی ایشن نے اس امید کا اظہار کیا ہے کہ حکومت تیزی سے اپنے مکانات کی تعمیر اور دیگر منصوبے کو آگے بڑھائے گی جس سے تعمیری صنعت کو فروغ ملے گا جو ملک میں روزگار کی فراہمی کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔

Check Also

تھر کول پاور پراجیکٹ

تھر کول کی بجلی نیشنل گرڈ میں شامل

اسلام کوٹ: پاکستان کو بجلی کی بجلی کی فراہمی شروع کرتے ہوئے تھر کے کوئلے …