بدھ , اپریل 24 2019
Home / بین الاقوامی / آسٹریلیا نے پاکستان کو 0-5 سے وائٹ واش کردیا

آسٹریلیا نے پاکستان کو 0-5 سے وائٹ واش کردیا

محمد واحد

آسٹریلیا نے پاکستان کو 0-5 سے وائٹ واش کردیا. ورلڈکپ سے قبل اہم کھلاڑیوں کو آرام دینے کا فیصلہ پاکستان کرکٹ ٹیم کے لیے بھیانک خواب ثابت ہوا ہے.

کینگروز نے پانچواں ایک روزہ انٹرنیشنل میچ 20 رنز سے جیت کر سیریز 0-5 سے اپنے نام کرلی۔ ایک سنچری، 2 نصف سنچری اور 2 سنچری شراکت بھی گرین شرٹس کو سیریز میں پہلی فتح نہ دلاسکی۔ گلین مکیسیویل کو جارحانہ اننگز پر مرد میدان قرار دیا گیا۔ عمدہ بیٹنگ پر آسٹریلوی کپتان ایرون فنچ سیریز کے بہترین کھلاڑی قرار پائے۔

دبئی میں کھیلے گئے سیریز کے آخری ون ڈے میں پاکستانی کپتان عماد وسیم نے ٹاس جیت کر فیلڈنگ کا فیصلہ کیا، لیکن آسٹریلوی بلے بازوں نے پاکستانی کپتان کے فیصلے کو غلط ثابت کرتے ہوئے 327 رنز کا پہاڑ کھڑا کردیا۔ عثمان خواجہ اور ایرون فنچ نے 134 رنز کا عمدہ آغاز فراہم کیا۔ فنچ آؤٹ ہونے والے پہلے کھلاڑی تھے جو 53 رنز بناکر عثمان شنواری کی گیند پر بولڈ ہوئے۔ ایرون فنچ کی اننگز میں 2 چوکے اور 2 چھکے شامل ہیں۔

آسٹریلیا کو 214 کے مجموعے پردوسرا نقصان عثمان خواجہ کا اٹھانا پڑا جو 2 رنز کی کمی سے سنچری اسکور نہ کرسکے اور 98 رنز بناکر عثمان شنواری کا دوسرا شکار بنے۔ عثمان نے اپنی اننگز میں 10 چوکے لگائے۔ شان مارش 5 چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 61 رنز بناکر جنید خان کے ہاتھوں پویلین واپس لوٹے۔

مارکس اسٹوئنس 4 رنز بناکر عثمان شنواری کی تیسری وکٹ بنے۔ گلین میکسیویل نے جارحانہ اننگز کھیلی اور 33 گیندوں پر 70 رنز اسکور کرکے کینگروز کو بڑا مجموعہ اسکور بورڈ پر سجانے میں مدد کی۔ میکسیویل نے 10 چوکے اور 2 چھکے لگائے اور جنید خان کی گیند پر بولڈ ہوئے۔

پیٹر ہینڈز کومب کو 8 رنز پر عثمان شنواری نے ایل بی ڈبلیو کردیا۔ ایلکس کیری کو جنید خان نے کھاتہ کھولنے کا بھی موقع نہ دیا۔ آسٹریلیا نے مقررہ 50 اوورز میں 7 وکٹوں میں 327 رنز اسکور کیے۔ عثمان خان شنواری 4 اور جنید خان نے 3 وکٹیں حاصل کیں۔

پاکستان کو 328 رنز کے مشکل ہدف کے تعاقب میں پہلے ہی اوور میں نقصان اٹھانا پڑا جب گزشتہ میچ کے سنچری میکر عابد علی بغیر کوئی رنز بنائے آؤٹ ہوگئے۔ شان مسعود اور حارث سہیل نے ذمے داری سے بیٹنگ کرتے ہوئے اسکور 108 رنز پر پہنچادیا۔ شان نصف سنچری مکمل ہوتے ہی ایڈم زیمپا کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہوگئے۔ شان مسعود نے 50 رنز میں 3 چوکے لگائے۔

محمد رضوان 12 رنز بناکر میکسیویل کی گیند پر نیتھن لائن کے ہاتھوں کیچ ہوگئے۔ حارث سہیل اور عمر اکمل نے ذمے دارانہ بیٹنگ کرتے ہوئے پاکستان کی جیت کی امیدوں کو زندہ رکھا۔ دونوں نے چوتھی وکٹ کی شراکت میں 102 رنز جوڑ کر ٹیم کا اسکور 238 رنز تک پہنچایا۔ اس موقع پر عمر اکمل کریز سے باہر نکل کر نیتھن لائن کو چھکا لگانے کی کوشش میں لانگ آن باؤنڈری پر کیچ ہوگئے۔ عمر نے 3 چوکوں کی مدد سے 43 رنز بنائے۔ صرف دو رنز کے اضافے سے حارث سہیل بھی آؤٹ ہوگئے۔ حارث نے شاندار بیٹنگ کرتے ہوئے سیریز میں دوسری سنچری اسکور کی۔ انہوں نے 11 چوکوں اور 3 چھکوں کی مدد سے 130 رنز کی اننگز کھیلی۔

سعد علی 4 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔ یاسر شاہ 11 بناکر پویلین لوٹے۔ کپتان عماد وسیم نے بھرپور مزاحمت کی لیکن ان کی کوشش بارآور ثابت نہ ہوئیں اور پاکستانی ٹیم مقررہ اوورز میں 7 وکٹوں پر 307 رنز بناسکی۔ عماد وسیم نے ناقابل شکست 50 رنز بنائے جس میں 6 چوکے اور ایک چھکا شامل ہے۔ جیسن بہرن ڈروف نے 3 وکٹیں حاصل کیں۔ رچرڈ سن، نیتھن لائن، ایڈم زیمپا اور گلین میکسیویل نے ایک ایک کھلاڑی آؤٹ کیا۔

عمدہ بیٹنگ پر میکسویل کو میچ اور ایرون فنچ کو سیریز کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔ فنچ نے 2 سنچری اور 2 نصف سنچری کی مدد میں سیریز میں 451 رنز اسکور کیے اور ان کا اوسط 112 رنز رہا۔ عثمان خواجہ نے 272 رنز بنائے۔ وہ 2 مرتبہ سنچری کے قریب پہنچ کر تھری فیگر حاصل نہ کرسکے۔ مجموعی طور پر عثمان خواجہ نے تین نصف سنچری اسکور کیں۔ گلین میکسیویل نے 84 کی اوسط سے 254 رنز بنائے اور ان کا اسٹرائیک ریٹ 138 رہا۔

دنیا کے بہترین بولنگ اٹیک کی دعویدار پاکستانی بولنگ لائن اپ 5 ایک روزہ انٹرنیشنل میچز کی سیریز میں ایک بار بھی آسٹریلیا کی ٹیم کو آل آؤٹ نہ کرسکی۔ فاسٹ بولر عثمان شنواری نے تین میچوں میں پانچ وکٹیں حاصل کیں۔ انہوں نے آخری ون ڈے میں 49 رنز دے کر 4 کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔ شاداب خان کی جگہ کھیلنے والے لیگ اسپنر یاسر شاہ اور جنید خان نے چار، چار اور عماد وسیم نے تین وکٹیں حاصل کیں۔

Check Also

اقوام متحدہ نے تسلیم کیا ہے کہ ہر انسان کو پینے کے صاف پانی کا حق حاصل ہے

پینے کے صاف پانی کا حق اور عالمی قانون

محمد علی شاہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے 28 جولائی 2010ء کو ایک تاریخی …